america-remarks-about-terrorism 146

انڈیا پاکستان میں دہشتگردی کیلئے افغان سر زمین استعمال نہیں کر رہا: امریکہ

سی پیک اچھا منصوبہ مگر شفافیت ضروری ، افغان امن کا فائدہ پاکستان کو ہو گا ، ایس ویلز زلمے خلیل کی آرمی چیف، مشیر خزانہ ، وزارت خارجہ کے حکام سے ملا قا تھیں ،


america-remarks-about-terrorism

اعلامیہ جاری امریکا نے کہا ہے کہ اسے اس بات کے کوئی ثبوت نہیں ملے کہ بھارت پاکستان میں دہشت گردی کے لیے افغان سرزمین استعمال کر رہا ہے۔

بدھ کو امریکی سفارتخانے میں صحافیوں سے گفتگو کر تے ہوئے نائب وزیر خارجہ ایلس ویلز نے کہا کہ انھیں اس نوع کے کوئی شواہد نہیں ملے کہ انڈیا افغان سرزمین کا استعمال کرتے ہوئے پاکستان میں دہشتگردی کو فروغ دے رہا ہے۔

یہ خبر بھی پڑھے: لاڑکانہ ایڈز پھیلانے کے الزام میں ڈاکٹر گرفتار،15 افراد میں وائرس

انھوں نے کہا کہ ہماری پالیسی واضح ہے کہ کسی بھی ملک کو غیر ریاستی عناصر کو سپورٹ نہیں کر نا چا ہے۔ ایلیس و میز کے بیان سے ظاہر ہوتا ہے کہ امریکا ، بھارت کے بارے میں پاکستان کے بیانیے سے متفق نہیں ہے ۔

بھارت کی طرف سے افغان سرزمین پاکستان کیخلاف استعمال کرنے کے شواہد نہیں ملے۔ دریں انشامانیٹرنگ ڈیک کے مطابق امریکی نائب معاون وزیر خارجہ ایلیس و میز کا کہنا ہے کہ سی پیک اچھا منصوبہ ہے لیکن اس میں شفافیت ہونی چاہیے ۔

اسلام آباد میں میڈیا نمائندوں کو بریفنگ دیتے ہوئے ایس ویلز کا کہنا تھا کہ پاکستانی حکومت کی طرف سے نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد بھی خوش آئند ہے۔ افغان ستان کے بارے میں وزیر اعظم عمران کا پالیسی بیان خوش آئند ہے۔

اگر افغانستان میں امن ہو گا تو سب سے زیادہ فائدہ پاکستان کو ہو گا۔ اس لیے پاکستان اور افغانستان کو باہمی معاملات کو حل کر نے کی ضرورت ہے۔ افغانستان امن بات چیت کے حوالے سے لے خلیل زاد کی ملاقاتوں میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔

پاکستان میں معاشی استحکام علاقائی استحکام کے لیے بہت ضروری ہے ۔ ایلیس ویلز نے کہا کہ بھارت کی طرف سے افغان سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال کر نے کے شواہد نہیں ملے ۔ جو پاکستان کا دشمن ہے وہ امریکا کا بھی دشمن ہے۔

دریں اثناء منگل کے روز امریکی سفارتخانے کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق دور از دورے کے دوران ایلیس ویلز اور زلمے خلیل زاد نے پاکستان کے اعلی حکام سے علاقائی سیکیورٹی اور افغان مفاہمتی عمل کے حوالے سے بات چیت کی ۔

ایلیس ویلز نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ چیر مین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی مشیر خزانہ عبدالحفیظ شخ سیکر ٹری خارجہ اور وزارت خارجہ کے حکام سے ملاقاتیں کیں جن میں جنوبی ایشیاء میں امن و استحکام کیلئے تمام سٹیک ہولڈرز کو مل کر کام کرنے اور پاک امریکہ معاشی تعلقات پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔

امریکی نمائندہ خصوصی زلمے خلیل زاد نے انٹرا افغان مذاکرات میں تیزی لانے کی حمایت کی درخواست کرتے ہوئے کہا ہے کہ افغانستان میں جنگ کا خاتمها من واستحکام لائے گا۔ اعلامیہ میں کہا گیا کہ زلے خلیل زاد نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، سیکریٹری خارجہ اور اعلی عسکری و سفارتی حکام سے ملاقاتیں کی۔

اس پوسٹ پر کمینٹ کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں